Home » ماہوارہ کی خرابیا

ماہوارہ کی خرابیا

6fc18b89e31e461

بعض اوقات ہوتا یوں ہے کہ لڑکیوں کو عہد بلوغت میں پہنچکر بھی خون حیض نہیں آتا۔ اور اگر آتا بھی ہے تو سن یاس تک کسی وقت بھی بند ہو سکتا ہے۔ بندش حیض کی ان دونوں صورتوں کو میڈیکل اصطلاح میں ایمے نوریا احتباس الطمث کہتے ہیں لیکن مرض کی تشریح تشخیص اور علاج میں سہولت کے پیش نظر احتباس الطمث کو دو بڑی حالتوں میں تقسیم کر دیا گیا ہے۔ ابتدائی احتباس طمث ، ثانوی احتباس طمث۔
ابتدائی احتباس طمث
اگر کسی لڑکی کو عہد بلوغت میں پہنچ کر بھی حیض نہ آئے تو اس بندش حیض کو ابتدائی احتباس طمث کہا جائے گا۔

ثانوی احتباس طمث
عہد بلوغت اور شادی کے بعد سے لے کر سن یاس تک اگر حیض آتے آتے اچانک بند ہو جائے تو اس صورت حال کو ثانوی یا اتفاقی احتباس الطمث کہتے ہیں۔

اسباب
اعضائے تناسل، مثلاً رحم، خصیتہ الرحم اور قاذفین یا اندام نہانی کے غیر طبعی افعال یا غیر طبعی جسامت و بناوٹ حیض کے دوران شدید سرد پانی سے غسل، سردی لگ جانا۔ ناقص غذاوْں کا استعمال۔ عام جسمانی کمزوری، مختلف امراض میں مبتلا رہنا، قلت الدم، عصبی صدمات مثلاً غصہ، خوف اور حد سے زیادہ خوشی، تبدیلی آب و ہوا، کثرت جماع اور سرد و گرم علاقوں میں سفر،
علامات
خون کی کمی کے باعث مریضہ بے حد کمزور اور نحیف ہو جاتی ہے۔
رنگ زرد یا سیاہی مائل ہو جاتا ہے۔
چہرے پر خشکی اور مرجھاہٹ چھائی رہتی ہے۔
طبیعت سست اور کسل مند رہتی ہے۔
بھوک ختم ہو جاتی ہے۔
سر درد اور قبض کی شکایت رہنے لگتی ہے۔
انذار

189-620x330

اس مرض کا اگر بر وقت علاج نہ کیا جائے تو متعدد امراض پیدا ہو جاتے ہیں، مثلاً
التہاب الرحم، وجع الرحم، صلابت رحم، بواسیر رحم، استسقاء الرحم، ہسٹریا، جنون اور مرگی، بدہضمی، شدید سر درد، قلت الدم، خفقان، اختلاج قلب، غشی، تشنج، خارش، بانجھ پن، پھوڑے پھنسیاں، بخار، کھانسی، نزلہ، نکسیر ضیق النفس، یرقان اور تپ دق وغیرہ،
علاج میں غفلت اور بے احتیاطی مہلک ثابت ہو سکتی ہے۔

ماہوارہ-کی-خرابیا

Leave a Reply